پاک چین جوائنٹ ورکنگ گروپ کا اجلاس’ جدید زرعی ٹیکنالوجی کا حصول، زرعی معلومات اور جرم مایہ کے تبادلہ پر اتفاق رائے

اسلام آباد ۔ (سٹاف رپورٹ) پاکستان۔ چین جوائنٹ ورکنگ گروپ کا اجلاس وزارت زراعت و دیہی امور چین اور وفاقی وزارت غذائی تحفظ و تحقیق کے درمیان اسلام آباد میں منعقد ہوا۔ اجلاس کا بنیادی مقصد دونوں ممالک کے درمیان زرعی تعاون کو اگلی سطح پر لے کر جانا ہے۔ اجلاس کے دوران فصلوں کی پیداواری استعداد میں اضافہ، جدید زرعی ٹیکنالوجی کا حصول، زرعی معلومات اور جرم مایہ کے تبادلہ پر اتفاق رائے پایا گیا۔ جرم مایہ کے تبادلہ سے مخلتف اقسام کے جینز کی تیاری میں مدد ملے گی جو کہ ماحولیاتی اور دیگر چیلنجز کا مقابلہ کرنے کی اہلیت رکھتے ہوں۔ سبزیوں اور پھلوں کی پروسیسنگ کے لئے مشترکہ سرمایہ کاری پر اتفاق پایا گیا۔ جدید زرعی مشینری سے متعلق سرمایہ کاری کے لئے حکومت پاکستان مقامی سرمایہ کاروں سے شراکت کی راہیں ہموار کرے گی۔ اجلاس میں مقامی سطح پر کھادوں اور کیڑے مار ادویات کی تیاری کے لئے دونوں ممالک کے درمیان پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ پر غور بھی کیا گیا۔ چین پاکستان کو جڑی بوٹیوں اور کیڑوں کے خلاف مضبوط مدافعت کے بیج فراہم کرے گا۔ چین کے تعاون سے پانی کے ضیاع کو روکنے کے لئے آزمائشی بنیادوں پر ڈرپ ایریگیشن، مائیکرو سپرنکل ایریگیشن اور فرٹیگیشن کا استعمال کیا جائیگا۔ چینی ماہرین منہ کھر بیماری کے خاتمے اور اس سے پاک فری زون کے قیام کے لئے پاکستانی ماہرین کے ساتھ مل کر کام کریں گے۔ دونوں ممالک کے درمیان زرعی تجارتی حجم میں اضافے کیلئے مارکیٹ کی معلومات کے تبادلہ پر اتفاق کیا گیا۔ اجلاس میں پاکستان میں زرعی تحقیقی مقاصد کے لئے ”سینٹر آف ایکسیلینس” کے قیام پر غور کیا گیا۔ یہ زرعی تحقیقی مراکز لائیو اسٹاک، فشریز اور کپاس کے متعلق تحقیقی کام کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں