اسلام آباد:افغانستان کے خلاف پاکستانی سرزمین استعمال کیلئے دینا جنگ میں دھکیلنے کے مترادف ہے، مولانا فضل الرحمن

اسلام آباد:(صاف بات)جمعیت علماء اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ عمران خان کا پاکستان میں امریکی ڈرون حملوں کی مخالفت کرنا ایک ڈرامہ ثابت ہوا، پاکستان میں امریکی افواج کو ایئربیسز حوالے کرنے کی خبروں پر تشویش ہے، ایسا فیصلہ 2001 میں بھی کیا گیا تھا۔اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران فضل الرحمٰن نے کہا کہ افغانستان کے خلاف پاکستانی سرزمین استعمال کیلئے دینا جنگ میں دھکیلنے کے مترادف ہے، جنگ کے لیے اڈے دیں گے تو جنگ کو دعوت دیں گے، پاکستان کی سرزمین اور فضائیں کسی کےخلاف استعمال کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے معیشت کا دیوالیہ نکال دیا ہے، حکومت سے مستقبل میں کسی بہتری کی امید نہیں۔مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ جے یو آئی کی مرکزی مجلس شوریٰ کا اجلاس 2 دن جاری رہا، جس میں اہم قومی مسائل زیر غور آئے۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن اتحاد (پی ڈی ایم) کو بھرپور عوامی قوت کے ساتھ متحرک کیا جائے گا، 29 مئی کو پی ڈی ایم کا سربراہی اجلاس بلایا گیا ہے۔

اُن کاکہنا تھا کہ جے یو آئی اس پی ڈی ایم کے اجلاس میں اپنی تجاویز دے گی، تمام جماعتوں کے ساتھ مشاورت سے لائحہ عمل طے کریں گے۔انہوں نےمزید کہاکہ ملکی اوربین الاقوامی اداروں کی رپورٹیں ہمارے موقف سے اتفاق کرتی ہیں، حکومت نے سازش کے تحت مغرب کی تہذیب کو فروغ دیا۔جے یو آئی (ف) کے سربراہ نے یہ بھی کہا کہ فاٹا میں نیا نظام غیر موثر ثابت ہوا، حکومت صورتحال کو قابو کرنے میں بے بس ہے۔

اُن کاکہنا تھا کہ جے یو آئی کی شوریٰ نے وقف املاک ایکٹ کو مسترد کردیا ہے، یہ قانون غیر آئینی ہے، اسے نظریاتی کونسل میں بھیجا جائے۔مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ جے یو آئی نے وفاق المدارس بورڈ کو مزید مضبوط کرنے پر اتفاق کیا ہے، ہمارے زیر انتظام مدارس سرکاری بورڈ میں شمولیت اختیار نہیں کریں گے، چاروں صوبوں اور قومی سطح پر مدارس کنونشن بلائیں گے۔انہوں نے کہا کہ عمران خان کا پاکستان میں امریکی ڈرون حملوں کی مخالفت کرنا ایک ڈرامہ ثابت ہوا، افغانستان کے داخلی معاملے میں کود کر جنگ کے شعلے اپنے ملک تک لے آئے، جنگ کے لیے اڈے دیں گے تو جنگ کو دعوت دیں گے، پاکستان کی سرزمین اور فضا کسی کے خلاف استعمال کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں